الفاظ کی اپنی ہی ایک دنیا ہوتی ہے۔ ہر لفظ اپنی ذمہ داری نبھاتا ہے، 

الفاظ کی اپنی ہی ایک دنیا ہوتی ہے۔ ہر لفظ اپنی ذمہ داری نبھاتا ہے

کچھ لفظ حکومت کرتے ہیں۔ ۔ ۔ 
کچھ غلامی۔ ۔ ۔
کچھ لفظ حفاظت کرتے ہیں۔ ۔ ۔ 
اور کچھ وار۔ ۔ ۔ 
ہر لفظ کا اپنا ایک مکمّل وجود ہوتا ہے ۔ جب سے میں نے لفظوں کو پڑھنے کے ساتھ ساتھ سمجھنا شروع کیا،
تو سمجھا 
لفظ صرف معنی نہیں رکھتے، 
یہ تو دانت رکھتے ہیں۔ ۔ ۔ جو کاٹ لیتے ہیں۔ ۔ ۔
یہ ہاتھ رکھتے ہیں، 

جو گریبان کو پھاڑ دیتے ہیں۔ ۔ ۔
یہ پاؤں رکھتے ہیں،

جو ٹھوکر لگا دیتے ہیں۔ ۔ ۔
اور ان لفظوں کے ہاتھوں میں لہجہ کا اسلحہ تھما دیا جائے،

تو یہ وجود کو چھلنی کرنے پر بھی قدرت رکھتے ہیں۔ ۔ ۔
اپنے لفظوں کے بارے میں محتاط ہو جاؤ، 

انہیں ادا کرنے سے پہلے سوچ لو کہ یہ کسی کے وجود کو سمیٹیں گے

یا کرچی کرچی بکھیر دیں گے۔ ۔ ۔
کیونکہ
یہ تمہاری ادائیگی کے غلام ہیں اور تم ان کے بادشاہ ۔ ۔ ۔
*اور بادشاہ اپنی رعایا کا ذمہ دار ہوتا ہے اور اپنے سے بڑے بادشاہ کو جواب دہ بھی۔ ۔ ۔*

ترقی کرتا پاکستان.رائیٹرنامعلوم

*ترقی کرتا پاکستان*—————-⭕۔۔۔۔۔

کراچی میں بجلی بحران 4دن برقرار رہنے کا امکان

ملک میں بجلی کا شارٹ فال 4500 میگاواٹ ہے، شہروں میں 8 گھنٹے اور دیہات میں 10 گھنٹے لوڈ شیڈنگ کی جارہی ہے۔
کراچی میں بجلی کا بحران مزید 4دن برقرار رہنے کا امکان ظاہر کیا گیا ہے،شدید گرمی سے پریشان شہریوں کو لوڈ شیڈنگ نے ہلکان کردیا ۔
بن قاسم پاور پلانٹ کی ’فنی خرابی‘ کراچی والوں کی جان کو آگئی،شہر کے اکثر علاقوں میں لوڈ شیڈنگ کا دورانیہ 12 گھنٹے تک پہنچ گیا، شدید گرمی میں بجلی کے بغیر معمولاتِ زندگی ٹھپ ہوکر رہ گئے، بچے بڑے سب پریشان ہیں۔
کے الیکٹرک کا کہنا ہےکہ پلانٹ کی بوائلر ٹیوب خراب ہوگئی ہے، جس کی مرمت میں مزید تین سے چار دن لگیں گے اور لوڈ شیڈنگ بھی اسی حساب سے جاری رہے گی۔
نہ تم آئے، نہ چین آیا، نہ نیند آئی، نہ خواب آیا،آجکل کراچی والوں کا یہ شکوہ بجلی سے ہے جو جاتی ہے تو آکر ہی نہیں دیتی، موسم چونکہ انتہائی گرم ہے، اس لئے بجلی جاتے ہی تن بدن میں آگ سی لگ جاتی ہے اور شہری کے الیکٹرک کیلئے وہ زبان استعمال کرنے لگتے ہیں جو پارلیمنٹ میں تو بولی اور سنی جاسکتی ہے مگر میڈیا میں ہرگز نہیں۔
’جیونیوز‘ کے دفتر میں عوامی شکایات کا تانتا بندھا ہوا ہے، بتایا جارہا ہے کہ اکثر علاقوں میں لوڈ شیڈنگ کا دورانیہ 12 گھنٹے تک جا پہنچا ہے۔

دن کا بیشتر حصہ بجلی کے بغیر کٹ رہا ہے جبکہ کے الیکٹرک کی ’مستی‘ رات کو بھی جاری رہتی ہے جس سے کام پر جانے والے بڑے اور اسکول کالج جانے والےبچے یکساں متاثر ہورہے ہیں، صنعتی ایریاز میں بھی 6سے 8گھنٹے لوڈ شیڈنگ کی جارہی ہے۔

اس فساد کی جڑ 3روز پہلے بن قاسم پاور پلانٹ کی بوائلر ٹیوب میں ہونے والی خرابی بتائی گئی ہے۔

کے الیکٹرک کے ذرائع کا کہنا ہے کہ مرمت میں دو سے تین روز لگ سکتے ہیں اس لئے اضافی لوڈشیڈنگ بھی مزید تین چار دن جاری رہنے کا امکان ہے۔

کے الیکٹرک کی جانب سے گیس پریشر میں کمی کا عذر بھی پیش کیا گیا جسے ترجمان سوئی سدرن گیس کمپنی نے مسترد کردیا ہے۔
ترجمان سوئی سدرن کا کہنا ہے کہ کے الیکٹرک کو پورے پریشر سے گیس دی جارہی ہے۔

شہر میں بجلی کی طلب 2975 میگاواٹ تک پہنچ گئی جسے غیر اعلانیہ لوڈشیڈنگ سے پورا کیا جارہا ہے

صوبائی سیکریٹری تعلیم عبدالعزیزعقیلی نے کہا ہے کہ صوبے کے تمام اسکولوں میں ضروری سہولیات فراہم کرنے کے لئے پروگرام مرتب کیا گیا ہے 

نواب شاہ
صوبائی سیکریٹری تعلیم عبدالعزیزعقیلی نے کہا ہے کہ صوبے کے تمام اسکولوں میں ضروری سہولیات فراہم کرنے کے لئے پروگرام مرتب کیا گیا ہے 
مقامی سطح پر مسائل کے حل کے لئے ڈویژنل وضلع سطح پر  ریفارم کمیٹیاں تشکیل دی گئی ہیں وہ آج کمشنر آفس کے کمیٹی روم میں شہیدبےنظیرآباد ڈویژن کے محکمہ تعلیم کے افسران کے اجلاس سے خطاب کررہے تھے انہوں نے کہا کہ اسکولوں میں سولر سسٹم،چاردیواری،باتھ روم،اور پانی کی فراہمی کے ئے رقم تمام اضلاع کو فراہم کردی گئی ہے اور 30 جون سے پہلے کافی اسکولوں میں سہولیات مہیا کردی جائیں گی انہوں نے کہا کہ بچوں کو اسکولوں  میں لانا ہماری ترجیحات میں  شامل ہے کوشش کرنی ہے کہ بچوں کو اسکول میں داخل کرایا جائے انہوں نے کہا کہ تقریباڈیڑھ لاکھ ملازمین اور اساتذہ کے مسائل سیکریٹریٹ میں بیٹھ کر حل کرنا مشکل ہے اس لئے ڈپٹی کمشنر کی سربراہی میں ڈسٹرکٹ ریفارمزاوورسائیٹ کمیٹیاں تشکیل دی گئی ہیں جن کےماہانہ اجلاس  ہونگے اور وہ مقامی سطح پر اسکولوں کے مسائل حل کریں گے انہوں نے کہا کہ دیہات میں ڈیوٹی دینے والے اساتذہ مختلف طریقوں سے ٹرانسفر کرواکر شہر وں میں آجاتے ہیں جس سے دیہات میں اساتذہ کی کمی ہوجاتی ہے جبکہ شہروں میں اساتذہ کی تعداد ضرورت سے زیادہ ہوجاتی ہے اجلاس میں کمشنر غلام مصفیٰ پھل،ڈپٹی کمشنر نوشہروفیروز ڈاکٹروسیم شمشاد،ڈپٹی کمشنر سانگھڑ عمر فاروق بلو،ڈپٹی کمشنر شہیدبےنظیرآباد محمدنعمان صدیق ،ڈائریکٹراسکولس ، چیف انجنئیر ایجوکیشن ورکس اور ڈسٹرکٹ ایجوکیشن افسران نے شرکت کی۔

پوليو جي خلاف قومي مهم کي مزيد بهتر ڪرڻ جي صرورت آهي: ميمبرقومي اسيمبلي ڊاڪٽرعذراپيچوهو.

نواب شاھ  √ڊويزنل ٽاسڪ فورس براءِ پوليو جو اجلاس اڄ ميمبر قومي اسيمبلي ڊاڪٽرعذرافضل پيچوهو جي صدارت ۾ ڪمشنرآفيس ۾ منعقد ٿي.اجلاس کي خطاب ڪندي ڊاڪٽرعذرافضل پيچوهو چيو ته پوليو جي خلاف مهم جي ڪارڪردگي وڌيڪ بهتر ڪرڻ جي ضرورت آهي انشاءَ الله پورو ملڪ پوليو فري ٿي ويندو هن گرمي جي موجوه صورتحال ۽ بجلي جي لودشيڊنگ جي سبب پوليو ويڪسين جي درجه حرارت برقرار رکڻ جي لاءِ سولر سسٽم تي هلڻ واري ريفريجريٽر خريد ڪرڻ جو حڪم ڏنو هن ارڙي ۽ ٻين بيمارين کان بچاءَ لاءِ حفاظتي ٽڪا لڳائڻ واري نظام کي بهتر بنائڻ جي ضرورت تي زور ڏنو ۽ تمام ويڪسينيٽرن کي پوليو مهم مان هٽائڻ جو حڪم ڏنو ته جئين حفاظتي ٽڪا لڳائڻ جو نظام متاثر نه ٿئي. هن يونين ڪائونسل سطح تي مائڪرو پلان جوڙڻ جو حڪم ڏنو ۽ هر ٽيم انچارج جو موبائيل نمبر ڪنٽرول روم ۾ درج ڪرڻ جو حڪم به ڏنو هن چيو ته ضلع شهيد بينظيرآباد ۾ بنيادي صحت مرڪزن جو ڪم پي پي ايڇ آءِ جي حوالي ڪرڻ جي تجويز تي غورڪيو پيو وڃي

ٹوئردی سندھ سائیکل ریس کے شرکاء آج نواب شاہ پہنچے شاندار استقبال

نواب شاہ (بیورورپورٹ)محکمہ اسپورٹس اور یوتھ افئیر کی جانب سے منعقدہ ٹوئردی سندھ سائیکل ریس کے شرکاء آج سیہون سے بھٹ شاہ جاتے ہوئے نواب شاہ سے گذرے جہاں پر پریس کلب کے سامنے ریس کے شرکاء کو پھولوں کے ہار پہنائے گئے اور پھولوں کی پتیاں نچھاور کی گئی بعد میں سائیکل ریس بھٹ شاہ کے لئے روانہ ہوگئی جہاں وہ ایک دن کے قیام کے بعد اگلے مرحلے کے لئے حیدرآباد روانہ ہونگے واضع رہے کہ کھیلوں اور نوجوانوں کے معاملات کے صوبائی محکمے کے جانب سے 2 اپریل کو گھوٹکی سے ٹوئر دی سندھ سائیکل ریس شروع کی گئی تھی جو مختلف شہروں سے ہوتی ہوی 16 اپریل کو کراچی پہنچے گی ریس کا مقصد کھیلوں کو فروغ دینا ہے۔17800099_1911256705772678_7576652392015270614_n17795892_1911256729106009_7205116788250799404_n

قاضي احمد

قاضي احمد لڳ ڳوٺ سوائي راهو جو گرلز پرائمري اسڪول ڇهن مهينن کان بند ٻارڙين جا ساليانه امتحان به نه ٿيا ۔سوين ڇوڪرين جو مستقبل تباه ،سال ضايعه ٿي ويو هيڏي ساري نقصان جو زميوار آخر ڪير ؟
تفصيل موجب :
تعلقه قاضي احمد جي يوسي مير محمدجوڻو جو ڳوٺ سوائي راهو ۾ موجود گرلز پرائمري اسڪول گزريل ڇه مهينن کان بند فيبروري ۽ مارچ وارا ساليانه امتحان به نه ٿي سگهيا ۔ٻارن جو ساله ضايه ٿي ويو ۔
سوائي راهو جو ڳوٺ تقريبن تقريبن ٽي سئو گهرن تي مشتمل آهي ان کان علاوه آس پاس جا ٽي چار ننڍا ننڍا ڳوٺ به سوائي راهو کي لڳن ٿا ۔ٽوٽل 350 گهر لاء واحد گرلز اسڪول ٽيچر جي بدلي ٿيڻ ڪري بند ۔ڳوٺ جي ٽوٽل آبادي تقريبن 4000 کان 4500 ماڻهن تي مشتمل آهي جنهن ۾ هڪ اندازي مطابق هڪ هزار ڇوڪريون آهن جن مان 2، 3 ،4 ۽ 5کان 10 سال جي نياڻين جو تعداد لڳ ڀڳ 600 جي آهي ۔انهن مان اندازن وس وارن جون 100 کن نياڻيون قاضي احمد ۽ جوڻا موري جي پرائيويٽ اسڪولز ۾ تعليم پرائي رهيون آهن جڏهن ته سئو جي لڳ ڀڳ نياڻيون بوائز پرائمري اسڪول سوائي راهو ۾ تعليم پرائي رهيون آهن ۔ان کان علاوه سئو کان 150 سئو نياڻيون اسڪول ۾ اڃان تائين داخل ئي ناهن ڪيو ويون ۔باقي 250 کان ٽي سئو نياڻيون سوائي راهو گرلز پرائمري اسڪول ۾ داخل آهن هڪ اندازي مطابق ۔
انهن 250 شاگردياڻين مان 150 شاگردياڻيون ريگيولر هيون ۔ڇه مهينا پهرين اسڪول ۾ جوڻاموري جي رهواسڻ لاکو ٽيچر اين سي ايڇ ڊي جي ٽيچر پڙهائڻ لاء اسڪول ايندي هئي پر هاڻي اها به نٿي اچي ۔
اسڪول ۾ 150 مان 80 ٻارڙيون ڪچي پهرين ۽ پٽي ۾ داخل آهن جڏهن ته باقي 600 کآن ستر ڇوڪريون ترتيب وار ڪلاس پهريون ،ڪلاس ٻيون ،ڪلاس ٽيون ،ڪلاس چوٿون ۽ ڪلاس پنجي ۾ ريگيولر پڙهنديون هيون ۔
پر اين سي ايڇ ڊي جي ٽيچر جي خاندان جي حيدرآباد لڏي وڃڻ جي ڪري اسڪول گزريل ڇهن مهينن کان بند آهي ان کان پوء ٻي ڪا به ٽيچر اسڪول ۾ مقرر نه ڪئي وئي آهي ۔اسڪول ۾ صرف پٽيوالو ايندو آهي ۔بائيو ميٽرڪ وارا پٽيوالي کان آنڱوٺو وٺي هليا ويندا آهن ۔
پٽوالي ۽ ڳوٺاڻن بائيو ميٽرڪ وارن کي ڪافي دفعا چيوته ادا ٽيچر وٺرائي ڏيو ٻارن جا ساليانه امتحان ڪرايون ۔پر انهن جو جواب هوندو آهي ته اسان صرف پهنجي آنڱوٺي جا وارث آهيون ۔
اسڪول جي اسٽاف ۾ صرف هڪ پٽيوالو آهي اسان ان جي هجڻ جي تصديق ڪيون ٿا ۔اسٽاف ۾ ڪا به ٽيچر ناهي ان ۾ اسان ڪابه توهان جي مدد نٿا ڪري سگهون ۔
سماجي اڳواڻ جان محمد ڪليار ، بابو بهائي فوجي ۽ ڳوٺاڻي اسلم راهو اعلي حڪام کان مطالبو ڪيو ته ڪنهن به طريقي ۽ نموني سان ٻارڙين جا 2016/2017 جا ساليان امتحان ڪرائي شاگردياڻين جو سال بچايو وڃي ۽ آئنده جي لاء ڳوٺ سوائي راهو جي گرلز اسڪول کي ٽيچر ڏئي نياڻين جو مستقبل بچايو وڃي
ر۔پ سوشل ورڪر ،تبديلي پسند ضلعي شهيد بينظير آباد جو چيف آرگنائيزر جان محمد ڪليار قاضي احمد 03003316760

AK Dahri Chief Editor